دنیا کا طاقتور ترین پاسپورٹ کس ملک کا ہے؟

0 48

نیویارک  : عالمی ادارے ہینلے کی جانب سے 110 ممالک کے پاسپورٹ کی رینکنگ جاری کی گئی، جس میں جاپان اور سنگاپور نے مشترکہ طور پر ایسے ممالک کا اعزاز حاصل کیا جن کے پاس دنیا کا طاقتور ترین پاسپورٹ ہے۔

پاسپورٹس کی درجہ بندی کرنے والی عالمی تنظیم ہینلے پاسپورٹ انڈیکس کیو ٹو 2022ء کے مطابق پاکستانی پاسپورٹ کی دنیا بھر کے ممالک میں 109ویں پوزیشن ہے جس کی صرف 31 ممالک میں ویزا فری انٹری ہے۔

تاہم اس سے قبل پاکستانی پاسپورٹ کی پوزیشن ایک درجہ بہتر یعنی 108 نمبر پر تھی یعنی سبز پاسپورٹ کو ایک سہ ماہی بعد ایک نمبر تنزلی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ یمن، صومالیہ، فلسطین، نیپال، شمالی کوریا اور لیبیا ہینلے انڈیکس میں پاکستان سے بہتر ہیں جبکہ صرف جنگ سے متاثرہ ملک شام عراق اور افغانستان ہی پاکستان سے نیچے ہیں۔

جاپان اور سنگاپور کے پاسپورٹ بہترین فہرست میں اول نمبر پر ہیں۔ دونوں ملکوں کے شہری دنیا بھر کے 192 ملک میں بغیر ویزے کے ائیرپورٹ پر محض انٹری کرا کے داخل ہو سکتے ہیں۔

دوسرے نمبر پر جنوبی کوریا اور جرمنی ہیں جن کے شہری دنیا کے 190 ملکوں میں بغیر ویزے کے آ جا سکتے ہیں۔ اسی طرح فن لینڈ، اٹلی، لکسمبرگ اور سپین مشترکہ طور پر تیسرے نمبر پر آئے ہیں۔ ان ملکوں کے شہری دنیا کے 189 ملکوں میں بغیر ویزے کے جا سکتے ہیں۔

چوتھے نمبر پر آسٹریا، ڈنمارک، ہالینڈ اور سویڈن ہیں۔ اسی طرح پانچویں نمبر پر آئرلینڈ پرتگال، فرانس اور برطانیہ ہیں۔ چھٹے نمبر پر بلجئیم، نیوزی لینڈ، سوئٹزرلینڈ، ناروے اور امریکا ہیں۔

چیک ری پبلک، آسٹریلیا، کینیڈا، یونان اور مالٹا ساتویں نمبر پر ہیں۔ اسی طرح ہنگری آٹھویں نمبر پر ہے۔ لتھوانیا، سلواکیہ اور پولینڈ نویں نمبر پر جبکہ ایسٹونیا، لٹویا اور سلوانیہ دسویں نمبر پرہیں۔

بدترین پاسپورٹس کی فہرست میں پہلے نمبر پر افغانستان ہے جس کے شہری صرف 26 ممالک میں ویزے کے بغیر جا سکتے ہیں۔ دوسرے نمبر پر عراق جس کے شہری 28 اور تیسرے نمبر پر شام ہے جس کے شہری 29 ممالک میں بغیر ویزے کے جا سکتے ہیں۔

چوتھا نمبر پاکستان کا ہے۔ پانچواں نمبر یمن، چھٹا نمبر صومالیہ کا ہے۔ ساتویں پوزیشن مشترکہ طور پر فلسطین اور نیپال کی ہے۔ آٹھویں پوزیشن شمالی کوریا کی ہے جبکہ نویں پوزیشن لیبیا، کوسوو، اور بنگلا دیش کی ہے جبکہ دسویں پوزیشن لبنان، سری لنکا اور سوڈان کی ہے جن کے شہری 103 ممالک میں بغیر ویزا جا سکتے ہیں۔

عالمی ادارے ہینلے کا اپنے جاری کردہ بیان میں کہنا تھا کہ کورونا وائرس کے ہونے کے باوجود بہترین سفری سہولیات فراہم کرنے اور مسافروں کی حفاظت کو مدنظر رکھتے ہوئے ممالک کی درجہ بندی کی گئی ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.