حافظ سعید کو دہشتگردی کی مالی معاونت کرنے کے جرم میں 32 برس قید کی سزا

0 41

لاہور کی انسدادِ دہشتگردی کی عدالت نے دہشتگردی کی مالی معاونت کے الزامات میں کالعدم جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کو دو مقدمات میں مجموعی طور پر 32 برس قید کی سزا سنائی ہے۔

اُنھیں ایک مقدمے میں ساڑھے 15 اور دوسرے میں ساڑھے 16 برس کی قید سنائی گئی ہے جبکہ اُن پر مجموعی طور پر تین لاکھ 40 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے۔

حافظ سعید کے خلاف پنجاب کے محکمہ انسدادِ دہشتگردی (سی ٹی ڈی) نے مقدمات درج کیے تھے۔

حافظ سعید پہلے ہی جیل میں ہیں اور مختلف مقدمات میں سزا کاٹ رہے ہیں۔

فیصلے میں کیا کہا گیا ہے؟

عدالت نے کہا ہے کہ ملزمان حافظ سعید (امیرِ کالعدم لشکرِ طیبہ)، ظفر اقبال، عبدالغفار، امیر حمزہ، اور حافظ مسعود لشکرِ طیبہ نامی کالعدم تنظیم کے ارکان اور الدعوۃ و الارشاد نامی کالعدم تنظیم کے ٹرسٹی ہیں۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ مذکورہ ملزمان نے رکن اور ٹرسٹی کی حیثیت میں میاں چنّوں میں لشکرِ طیبہ کی ذیلی تنظیم الدعوۃ و الارشاد کے لیے زمین حاصل کی ہے۔

عدالت کے مطابق یہ زمین غلام حسن ولد محمد صافق نامی شخص نے مذکورہ تنظیم کو یہ زمین منتقل کی حالانکہ اس شخص معلوم تھا کہ یہ تنظیم دہشتگردی کی سرگرمیوں میں ملوث ہے اور یہ جائیداد دہشتگردی کے مقاصد کے لیے استعمال کی جائے گی، اور یہ کہ اس زمین کے حصول سے الدعوۃ و الارشاد دہشتگردی اور دہشتگردوں کے لیے فنڈز اکٹھے کر سکتی ہے۔

عدالت نے غلام حسن نامی شخص کو بھی مذکورہ تنظیم کو زمین فراہم کرنے پر سزا سنائی ہے جبکہ حافظ سعید سمیت شریک ملزمان کو زمین کے ذریعے دہشتگردی کی کارروائیوں کے لیے پیسے اکٹھے کرنے کے جرم میں بھی سزا سنائی گئی ہے۔

پہلے مقدمے 21/2019 میں حافظ سعید کو انسدادِ دہشتگردی ایکٹ کی مختلف شقوں کے تحت 15 برس اور چھ ماہ کی قید کی سزا سنائی ہے جبکہ دوسرے مقدمے 90/2019 میں 16 برس اور چھ ماہ کی قید سنائی گئی ہے۔

واضح رہے کہ انسدادِ دہشتگردی کی عدالت سے اس سے قبل بھی حافظ سعید کو متعدد سزائیں ہو چکی ہیں۔

تصویر کا ذریعہREUTERS

نومبر 2020 میں لاہور کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے حافظ محمد سعید کو تین مختلف الزامات میں مجموعی طور پر ساڑھے دس برس قید اور ایک لاکھ دس ہزار جرمانے کی سزا سنائی تھی۔

عدالت نے کالعدم تنظیم کے لیے فنڈ اکٹھے کرنے اور غیر قانونی قبضہ رکھنے کے دو مختلف الزامات میں حافظ سعید اور ان کے دو ساتھیوں ظفر اقبال اور یحییٰ مجاہد کو سزا سنائی تھی۔

اس کے علاوہ فروری 2020 میں بھی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے کالعدم تنظیم جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کو دو مقدمات میں مجموعی طور پر 11 برس قید بامشقت کی سزا سنائی تھی۔

حافظ سعید اور اُن کی تنظیم کے دیگر رہنماؤں کے خلاف نومبر 2019 میں فردِ جرم عائد کی گئی تھی۔

اس وقت حافظ سعید سمیت ان کی تنظیم کے دیگر رہنماؤں نے صحت جرم سے انکار کرتے ہوئے اپنے خلاف الزامات کو بے بنیاد قرار دیا تھا اور دعویٰ کیا تھا کہ یہ الزامات عالمی دباؤ کی وجہ سے لگائے گئے ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.