کسی قسم کی کرپٹ پریکٹس نہیں ہونی چاہیے، چیف جسٹس آف پاکستان

0 75

سلام آباد(امروز ویب ڈیسک) سپریم کورٹ نے سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ سے کرانے سے متعلق صدارتی ریفرنس کی سماعت کے موقع پرچیف الیکشن کمشنر اور ممبران کو آج منگل کو ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا ہے۔ عدالتی حکم میں کہا گیا ہے کہ چیف الیکشن کمشنر سینیٹ الیکشن کے حوالے سے الیکشن سکیم عدالت میں پیش کریں،شفاف، ایماندارانہ اور غیر جانبدارانہ انتخابات کرانا الیکشن کمیشن کی آئینی ذمہ داری ہے،الیکشن کمیشن کی یہ بھی ذمہ داری ہے کہ سینیٹ الیکشن کے حوالے سے الیکشن سکیم متعارف کرواتا ہے،الیکشن کمیشن ایسی کوئی بھی سکیم متعارف نہیں کروا سکا۔معاملہ کی سماعت چیف جسٹس کی سربراہی میں قائم پانچ رکنی لارجر بینچ نے کی۔چیف جسٹس نے دوران سماعت ریمارکس دئیے کہ سینیٹ الیکشن میں کسی قسم کی کرپٹ پریکٹس نہیں ہونی چاہیے، یہ کام روکنا الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے،

اس بات کو یقینی بنایا جانا چاہیے کہ سینیٹ الیکشن شفاف ہوں،ای سی پی ایک خودمختار ادارہ ہیں، کوئی قانون اس کا راستہ نہیں روک سکتا۔اٹارنی جنرل نے دلائل دئیے کہ اگر سینیٹ الیکشن خفیہ بھی ہو اور اس کے علاوہ بیلٹ کی شناخت بھی ہو سکے،کم از کم وہ بیلٹ الیکشن کمیشن کے لیے تو قابلِ شناخت ہونی چاہیے، الیکشن ڈے پر ووٹنگ خفیہ ہو لیکن بعد میں ووٹ کی شناخت ہونی چاہیے،اگر کہیں تضاد آتا ہے تو پارٹی سربراہ کو اسکا علم ہونا چاہیے،اس کے لیے کسی قانون سازی کی بھی ضرورت نہیں۔جسٹس عمر عطاءبندیال نے ایک موقع پر اٹارنی جنرل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے کہنے کا مطلب ہے کہ بیلٹ کا سیریل نمبر ہونا چاہیے،

جس پر اٹارنی جنرل نے کہا جی بلکل یہی مطلب ہے،جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دئیے کہ سینیٹ الیکشن سکیم تبدیل ہونی چاہیے، الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے کہ سینیٹ میں ووٹ خریدوفروخت کا سدباب کرے،اب تو اسکی وڈیوز بھی سامنے آ چکی ہیں،کیا الیکشن کمیشن سویا ہوا ہے یا جاگ رہا ہے؟جسٹس اعجازالاحسن نے استفسار کیا کہ بتایا جائے کہ گزشتہ چالیس سال میں کرپٹ پریکٹس کی وجہ سے کتنے ممبران نااہل کیے؟ ایک بھی کرپٹ ممبر کو سزا نہیں دی گئی،یہ آئین کے تحت الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے جس کو پورا کرنا لازمی ہے،کوئی قانون الیکشن کمیشن کے آئینی اختیارات ختم نہیں کر سکتا،شفاف الیکشن کرانا الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے،قانون موجود ہے اس کے باوجود ای سی پی نے خفیہ بیلٹ کے حوالے سے اپنے ہاتھ باندھ لیے ہیں کہ کچھ نہیں کر سکتے،کیا ای سی پی خفیہ بیلٹ کو دیکھ سکتے ہیں؟ اگر ووٹ کی خریدوفروخت ہوئی ہے تو اسکا تعین کیسے کریں گے جب تک بیلٹ نہ دیکھ لیں، اگر عام انتخابات میں انگوٹھے کی تصدیق ہو سکتی ہے تو یہی سینیٹ میں کیوں لاگو نہیں سکتا؟

چیف جسٹس نے ایک موقع پر وکیل الیکشن کمیشن سے پوچھا کہ آپ اس بات کا تعین کیسے کرتے ہیں کہ آپکی آئین میں دی گئی ذمہ داری کیسے پوری ہو رہی ہے۔جس پر الیکشن کمیشن کے وکیل نے بتایا کہ کرپٹ پریکٹس کے سدباب کا الیکشن ایکٹ کے تحت اسکا ایک میکانزم دیا گیا ہے،کمیشن خفیہ بیلٹ نہیں دیکھ سکتا۔جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ ہم چیف الیکشن کمشنر کو بلا کر پوچھ لیتے ہیں۔جسٹس یحییٰ آفریدی نے ایک موقع پر کہا کہ اگر عام انتخابات خفیہ ہوتے ہیں اور بعد میں بیلٹ دیکھا جا سکتا ہے تو یہی طریقہ سینیٹ الیکشن میں اپلائی کیوں نہیں ہوتا؟ بعد ازاں معاملہ کی سماعت ایک دن کے لئے ملتوی کر دی گئی ہے

Leave A Reply

Your email address will not be published.