بلوچستان میں امن و امان کی صورتحال دن بدن خراب ہوتی جا رہی ہے،ساجد ترین ایڈووکیٹ

0 112

ایک خاتون تاج بی بی کا واقعہ ہمارے سامنے ایک بڑی مثال ہے جسے سیکورٹی فورسز نے چند روز قبل تربت میں قتل کیا تھا
اس طرح کا ظلم لوگوں کے دلوں میں نفرت پیدا کرتا ہے اور ریاست کو سمجھنا چاہیے کہ ترقی کا مطلب سڑکیں یا عمارتیں نہیں ہیں
کوئٹہ (امروز ویب ڈیسک)سینئر قانون دان ساجد ترین ایڈووکیٹبی این پی کے مرکزی رہنماء ساجد ترین ایڈووکیٹ، الیکشن کمیشن میں سینیٹ انتخابات کیلئے کاغذات نامزدگی جمع کررہے ہیں نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ بلوچستان میں امن و امان کی صورتحال دن بدن خراب ہوتی جا رہی ہے لیکن حکومت صورتحال پر قابو پانے میں دلچسپی نہیں لے رہی ہے۔ایک خاتون تاج بی بی کا واقعہ ہمارے سامنے ایک بڑی مثال ہے جسے سیکورٹی فورسز نے چند روز قبل تربت میں قتل کیا تھا۔ بلوچستان کے لوگ روزانہ کی بنیاد پر اپنے پیاروں کی لاشیں اٹھا رہے ہیں ، لیکن کسی سے نہیں پوچھا جاتا کہ کیوں؟دوسری طرف بلوچستان حکومت بلوچستان میں ترقی کے بڑے دعوے کر رہی ہے ، جبکہ دوسری طرف بلوچستان کے لوگ صرف اپنی زندگی پرامن طریقے سے گزارنے کی آزادی چاہتے ہیں ، جو حکومت فراہم نہیں کر سکتی کیونکہ ان کے پاس ایسا کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ساجد ترین ایڈووکیٹ نے مزید کہا کہ اس طرح کا ظلم لوگوں کے دلوں میں نفرت پیدا کرتا ہے اور ریاست کو سمجھنا چاہیے کہ ترقی کا مطلب سڑکیں یا عمارتیں نہیں ہیں۔ لیکن اصل ترقی لوگوں کو پرامن طریقے سے جینے کا حق دینا ہے اور ان کے حقوق کا تحفظ کرنا۔اگر تربت ، زیارت ، خضدار یا بلوچستان میں کہیں بھی ناانصافی ہوتی ہے تو ہم نے ہمیشہ اس کے خلاف آواز اٹھائی ہے اور اس کے خلاف آواز اٹھاتے رہیں گے۔ ریاست کو اب اپنے فرائض کو سمجھنا چاہیے اور بلوچستان کو وہی حقوق دینے چاہئیں جو اس نے بڑے صوبوں کو دیئے ہیں اور سب سے بڑا حق جینے کادنیا کے تمام ترقی یافتہ ممالک کی کامیابی کی وجہ ان کی سڑکیں ، عمارتیں وغیرہ نہیں ہیں۔ جبکہ ان کی کامیابی کی بنیادی وجہ انسانی حقوق کے تحفظ کی ریاست کی پالیسی ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.